خبریںصحت

افغانستان، ملک بھر میں دس ملین بچوں کو خسرہ اور پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلائے گئے۔

کابل (بی این اے) ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کا کہنا ہے کہ افغانستان میں پانچ سال سے کم عمر کے 5.36 ملین بچوں کو خسرہ کی ویکسین دی گئی۔
اس تنظیم کی جانب سے شائع کردہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 26 نومبر سے 12 دسمبر تک چلائی جانے والی مہم میں 9 ماہ سے 5 سال تک کے 5.36 ملین بچوں کو خسرہ کی ویکسین پلائی گئی۔
عالمی ادارہ صحت کی رپورٹ میں پیش کیے گئے اعدادوشمار کی بنیاد پر افغانستان میں رواں سال نومبر تک خسرہ کے 5 ہزار 484 کیسز کی تصدیق ہو چکی ہے اور بچوں میں انفیکشن کے باعث 300 کے قریب اموات ریکارڈ کی گئی ہیں۔
عالمی ادارہ صحت کی رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ 26 نومبر سے 12 دسمبر تک افغانستان میں 6.1 ملین بچوں کو پولیو کے قطرے پلائے گئے۔
افغانستان کے 34 صوبوں کے 329 اضلاع میں پولیو کے قطرے پلانے کا پروگرام نافذ کیا گیا ہے۔
سرکاری اعداد و شمار کے مطابق افغانستان میں پولیو کے مثبت کیسز کی تعداد کم ہو رہی ہے، 2020 میں 54 کیسز سے 2021 میں 4 کیسز اور اس سال 2 کیسزرجسٹرڈ کیے گئے ہیں۔
ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی رپورٹ میں افغانستان میں تنظیم کے نمائندے ڈاکٹر لو ڈپینگ کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ ’’ہم سردیوں کے موسم سے قبل افغان بچوں کو خسرہ اور پولیو سے محفوظ رکھنے میں کامیاب رہے‘‘۔
افغانستان میں پولیو کے مثبت کیسز کم ہو رہے ہیں اور یہ 2020 میں 54 کیسز سے کم ہو کر 2021 میں 4 اور اس سال 2 کیسز رہ گئے ہیں۔
ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی فراہم کردہ معلومات کی بنیاد پر خسرہ کی ویکسین محفوظ ہے اور 50 سال سے بچوں کو اس بیماری سے بچانے کے لیے دی جا رہی ہے۔
اس تنظیم کے مطابق گزشتہ 20 سالوں میں ویکسینیشن کے نفاذ سے دنیا میں 23 ملین بچوں کی زندگیاں بچائی گئی ہیں۔

مزید دکھائیں

متعلقہ مضامین

واپس اوپر بٹن